دینہ

اہل مغرب کی مان کر خالق کائنات کو چھوڑ کر مخلوق سے امیدیں وابستہ کر لی ہیں۔ امیر عبدالقدیر اعوان

دینہ: اہل مغرب کی مان کر خالق کائنات کو چھوڑ کر مخلوق سے امیدیں وابستہ کر لی ہیں اور سودی نظام کو ہم نے اپنے گلے کا ہار بنا لیا ہے۔

ان خیالات کا اظہار امیر عبدالقدیر اعوان شیخ سلسلہ نقشبندیہ اویسیہ و سربراہ تنظیم الاخوان پاکستان کا 40 روزہ سالانہ روحانی تربیتی اجتماع کے آخری روز خواتین و حضرات کی بہت بڑی تعداد سے خطاب کرتے ہوئے کیا۔

انہوں نے کہا کہ موجودہ ملکی صورتحال میں ہم توانائی کے بحران سے گزر رہے ہیں۔عام آدمی اس کی وجہ سے مہنگائی کے بوجھ تلے دب چکا ہے۔ ضرورت اس امر کی ہے کہ ان مشکل حالات سے نکلنے کے لیے ہم نے پیاس بجھانے کے لیے جس برتن سے پانی بہہ رہا ہے جس میں کئی سوراخ ہیں اس سے امید لگارکھی ہے ان سوراخوں کو بند کرنے کی ضرورت ہے۔ ان حالات میں بظاہر جو نظر آرہا ہے اس میں حقیقت نہ ہے بلکہ اصل حالات کچھ اور ہیں جو کہ ہماری نظر سے پوشیدہ ہیں۔

انہوں نے کہا کہ ملک میں اس وقت زنا عام ہے اور نکا ح کو مشکل کر دیا گیا ہے۔حلال روزی کمانا مشکل اور اور چوری ڈاکہ کو آسان کر دیا گیا ہے۔ان اعمال کے بعد ہم اللہ کریم سے کیا امید رکھیں کہ ہم پر خوشحالی آئے یا ہم سکون کی زندگی گزاریں گے۔سود کے متعلق اللہ کریم نے فرمادیا ہے کہ اُس کا لین دین کرنے والے اللہ اور اللہ کے رسول ﷺ کے ساتھ جنگ کرے گا۔کیا اس جنگ میں وہ جیت سکتا ہے ہرگز نہیں۔

انہوں نے مزید کہا کہ ہم اس وقت تمام نظام کو اپنے عقل و خرد سے چلانے کی کوشش کر رہے ہیں۔حالانکہ اللہ کریم نے ہمیں قرآن کریم عطا فرمایا۔جس میں زندگی گزارنے کا مکمل اسلوب موجود ہے۔ہم اس کے سنہری اصولوں کو اپنا کر ہی خوشحال ہو سکتے ہیں۔ امن کی بہاریں آسکتی ہیں اب بھی ہر ایک کی عزت محفوظ ہو سکتی ہے۔بشرطیہ کہ ہم ان اصولوں پر ملک کے نظام کو لے آئیں جو اللہ اور اللہ کے رسول ﷺ نے عطا فرمائے ہیں۔

یاد رہے کہ سلسلہ نقشبندیہ اویسیہ کے مرکز دارالعرفان منارہ میں 40 روزہ سالانہ روحانی اجتماع جاری تھا جس میں ملک کے طول و عرض اور بیرون ممالک سے بھی سالکین کی بہت بڑی تعداد نے جن میں خواتین کی بہت بڑی تعداد بھی شامل تھی اپنی روحانی تربیت کے لیے تشریف لائے۔

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔

Back to top button