جہلم

ضلع جہلم میں پڑھے لکھے نوجوانوں کی تعداد میں اضافہ، نوکریاں نہ ہونے سے مسائل بڑھنے لگے

جہلم: ضلع جہلم میں پڑھے لکھے نوجوانوں کی تعداد میں اضافہ، نوکریاں نہ ہونے سے مسائل بڑھنے لگے، پچھلے کئی سالوں سے سرکاری اداروں میں بھرتیاں نہ ہونے کی وجہ سے بے روزگاری میں اضافہ ، محکمہ تعلیم، محکمہ صحت، ایکسائز اینڈ ٹیکسیشن، محکمہ ذراعت ، محکمہ انہار ، محکمہ لائیو سٹاک ، محکمہ بلڈنگ ، محکمہ ہائی وے ، سمیت دیگر صوبائی و وفاقی محکموں میں سینکڑوں کی تعداد میں آسامیاں تقرری کی منتظر ہیں۔

شہر کی سماجی ، رفاعی ، فلاحی ، کارروباری تنظیموں کے عمائدین سمیت نوجوان نسل نے اخبار نویسوں سے خصوصی گفتگو کرتے ہوئے کہا کہ ضلع بھر کے سرکاری محکموں میں نئی بھرتیاں نہ ہونے کی وجہ سے سرکاری اداروں میں آنے والے سائلین کو بھی مشکلات کا سامنا کرناپڑ رہاہے، حکومت سرکاری اداروں میں پڑھے لکھے نوجوانوں کو بھرتی کرکے شہریوں کے مسائل کو کم کرنے میں کردار ادا کرے۔

انہوں نے کہا کہ ضلع بھر میں ہزاروں کی تعداد میں پڑھے لکھے نوجوان ڈگریاں حاصل کرکے دربدر کی ٹھوکریں کھانے پر مجبور ہیں ، جس کیوجہ سے متعدد گھرانوں کو معاشی بدحالی کا سامنا کرنا پڑ رہاہے والدین نے زندگی بھر کی جمع پونجی لگا کر بچوں کوزیورِ تعلیم سے آراستہ کیا اور امید لگا لی کہ بچے سرکاری اداروں میں خدمات سرانجام دینے کے ساتھ ساتھ اپنی اور اپنے خاندان کی کفالت کر سکیں گے لیکن پچھلے کئی سالوں سے سرکاری محکموں میں بھرتیاں نہ ہونے کیوجہ سے بیروزگاری میں غیر معمولی اضافہ ہو چکا ہے۔

شہری تنظیموں کے عمائدین سمیت بے روزگار پڑھے لکھے نوجوانوں کے والدین نے حکومت سے مطالبہ کیا ہے کہ سرکاری محکموں میں خالی آسامیوں پر نوجوانوں کی بھرتیاں کی جائیں تاکہ صوبائی و فاقی اداروں میں خالی ہونے والی آسامیوں پر نوجوان خدمات سرانجام دے سکیں جس سے شہریوں کے مسائل میں کمی واقع ہو سکے اور بیروزگاری کا خاتمہ ممکن ہو سکے۔

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔

Back to top button